Ubqari®

عالمی مرکز امن و روحانیت
اگرآپ کو ماہنامہ عبقری اور شیخ الوظائف کے بتائے گئے کسی نقش یا تعویذ سے فائدہ ہوا ہو تو ہمیں اس ای میل contact@ubqari.org پرتفصیل سے ضرور لکھیں ۔آپ کے قلم اٹھانے سے لاکھو ں کروڑوں لوگوں کو نفع ملے گا اور آپ کیلئے بہت بڑا صدقہ جاریہ ہوگا. - مزید معلومات کے لیے یہاں کلک کریں -- تسبیح خانہ لاہور میں ہر ماہ بعد نماز فجر اسم اعظم کا دم اور آٹھ روحانی پیکیج، حلقہ کشف المحجوب، خدمت والو ں کا مذاکرہ، مراقبہ اور شفائیہ دُعا ہوتی ہے۔ روح اور روحانیت میں کمال پانے والے ضرور شامل ہوں۔۔۔۔ -- تسبیح خانہ لاہور میں تبرکات کی زیارت ہر جمعرات ہوگی۔ مغرب سے پہلے مرد اور درس و دعا کے بعد خواتین۔۔۔۔ -- حضرت حکیم صاحب دامت برکاتہم کی درخواست:حضرت حکیم صاحب ان کی نسلوں عبقری اور تمام نظام کی مدد حفاظت کا تصور کر کےحم لاینصرون ہزاروں پڑھیں ،غفلت نہ کریں اور پیغام کو آگے پھیلائیں۔۔۔۔ -- سورۂ اخلاص کی گیارہ جمعراتوں کے عمل کا آغاز 29 ستمبر 2022 ءسے ہوا اور الوداعی دُعا 8 دسمبر 2022ء کو ہوگی، تسبیح خانہ میں لنگر پکا کر لائیں اور خود تقسیم کریں ہمیشہ ہدیہ کی نیت سے لائیں۔ اختتامی دُعا کے موقع پر شیخ الوظائف کی طرف سے ہر آنے والے کو لڈو کا ڈبہ گفٹ کیا جائے گا۔۔۔۔ -- پرچم عبقری صرف تسبیح خانہ تک محدودہے‘ ہر فرد کیلئے نہیں۔ماننے میں خیر اور نہ ماننے میں سخت نقصان اور حد سے زیادہ مشکلات،جس نے تجربہ کرنا ہو وہ بات نہ مانے۔۔۔۔ --

اسلاف اہل حدیث کی روادایاں

اسلام سلامتی ، امن و آشتی اوربھائی چارگی کا مذہب ہے ۔یہ ہمیں محبت کا سبق دیتا ہے، اللہ سے محبت ، اس کے رسول ﷺ سے محبت ، تمام انسانیت سے محبت۔ غرض یہ دین محبت دین ہے ،یہ اخوت کا مذہب ہے نہ کہ عداوت کا۔ اسلام نے اس وقت صلح کی شمع جلائی جب ہر طرف بغض و عناد کی تاریکی چھائی ہوئی تھی ۔حدیث پاک کی روشنی میں اللہ پاک کے نزدیک سب سے افضل عمل اللہ تعالیٰ کیلئے کسی سے محبت کرنا ہے ۔ اسی محبت کی ایک لڑی آپس میں سلام کرنا ہے اور سلام کو رواج دینے کا مطلب یہ ہے کہ سلامتی کو عام کرنا اور اپنے بھائی کو سلامتی امن عافیت کی دعا دینا ۔ ہمارے اسلاف اور بڑوں کی زندگی میں مروت ، محبت ، شفقت اور خیر خواہی کوٹ کوٹ کر بھری ہوئی تھی ، ایک دوسرے کے پیچھے نمازیں پڑھنا اور ایک دوسرے سے محبت اور پیار کرنا عام تھا ۔ حضرت مولانا احمد علی لاہوری رحمتہ اللہ علیہ، حضرت مولانا سید دائود غزنوی رحمتہ اللہ علیہ اکٹھے ایک ہی ساتھ جلسے میں شریک ہوتے ، حضرت مولانا احمدعلی لاہوری رحمتہ اللہ علیہ نماز عیدمولانا دائود غزنوی رحمہ اللہ کے پیچھے پڑھتے اور مولانا سید دائود غزنوی رحمتہ اللہ علیہ جب کبھی تشریف لاتے تو حضرت احمد علی لاہوری رحمتہ اللہ علیہ کے پیچھے نماز پڑھتے۔اسلاف کے مزاج کی رواداری کا عالم یہ تھا کہ ایک دوسرے کو ساتھ لے کر چلتے اور ایک دوسرے کی طبیعتوں اور مزاجوں کی بھرپور رعایت رکھتے تھے۔حضرت مولانا احمد علی لاہوری رحمتہ اللہ علیہ نے اپنی بیٹی ایک اہل حدیث عالم کے عقد میں دی اور حضرت لاہوری رحمتہ اللہ علیہ کے نواسے اب بھی امریکہ میں قرآن و سنت کی خدمت ا نجام دے رہے ہیں اور اس طرح کتنے بے شمار خاندان ہیں جن کی آپس میں رشتے داریاں یعنی ایک خاندان حنفی ہے تو دوسرے اہل حدیث یا بریلوی …آپس میں روابط ، آپس میں محبت اور پیار …انہی میں حضرت مفتی محمد حسین نعیمی رحمتہ اللہ علیہ (مہتمم جامعہ نعیمیہ ) موصوف بریلوے مسلک کے تھے لیکن نہایت معتدل مزاج، امت کو جوڑنے والے ، ایک دوسرے سے محبت پیار کرنے والے ، جب بھی کبھی لاہور میں اختلاف ہوا انہوں نے اپنوں کے طعنے سہے لیکن لوگوں کے درمیان پیار اور محبت کا پل بن کر دکھایا ، ان کی یہ قربانیاں اور دوسرے اسلاف کی لازوال قربانیاں صدا باقی رہیں گی ۔ حضرت خواجہ محمد ضیاء الدین صاحب قدس اللہ سرہ ا لعزیز سجادہ نشین سیال شریف کو چشتیہ نظامیہ کے جلیل القدر مشائخ میں شمار کیا گیا ہے ، آپ کو دارالعلوم دیو بند دعوت دی گئی اسٹیشن پر اساتذہ اور طلبہ نے استقبال کیا اور شیخ الحدیث مولاناا نور شاہ کشمیری رحمہ اللہ نے اس دن چھٹی کا اعلان فرمایا۔ آپ کو اپنی مستند پر بیٹھنے کی پیشکش کی اور آخر میں آپ سے دعا کی درخواست کی گئی۔شیخ التفسیر حضرت مولانا احمد علی لاہوری رحمتہ اللہ علیہ خدام الدین کے سالانہ جلسے میں دیگر مشائخ کے ساتھ آپ کو بھی مدعو کیا کرتے تھے۔ اسلاف یہ چند نہیں بلکہ بے بہا واقعات ہیں جو ہمیں اس فضاء کو عام کرنے کی دعوت دے رہے ہیں ۔ آئیے ہم امت کو ملانے کا ذریعہ بنیں نہ کہ توڑنے کا …ایک ضروری عرض یہ ہے کہ دینی مسائل کے سلسلے میں علمی اختلاف کوئی بری بات نہیں اختلاف ہوتا رہا ہے اور رہے گا۔ اس سلسلے میں محبت اور پیارکی ریت قائم رکھتے ہوئے معاملات کو حل کرلیا جائے تو بہت ہی مناسب معلوم ہوتاہے ۔اللہ مجھے بھی اس طرز کی توفیق عطا فرمائے ۔زیر نظر کتاب نفرتوںکے الائو میں ایک ابابیل کی سی کوشش ہے اور قینچی کے اس دور میں سوئی دھاگہ عام کرنے کی محنت ہے۔ جس کا بنیادی مقصد علمی اختلاف رہتے ہوئے عنادکو ختم کرنا ہے اور اللہ تعالیٰ کے اس قول ’’تعالٰوالٰی کلمۃ سواء بیننا و بیناکم‘‘ پر عمل ہے ۔نیتوں کا معاملہ اس کریم اللہ کے ساتھ ہے۔ اللہ اس کتا ب کوامت کوجوڑنے کا ذریعہ بنائے اورآپس کے عناد اورعداوت کو ختم کرنے کا ذریعہ بنائے۔چند صفحات کی جھلکیاں ملاحظہ ہوں۔٭ گالیاں دینے والے سے حسن سلوک ٭ سکھ کا ساتھ نیک سلوک ٭حدیث کا ادب و احترام٭بذریعہ خواب باہمی محبت کی رحنمائی



مزید کتب