Ubqari®

عالمی مرکز امن و روحانیت
اگرآپ کو ماہنامہ عبقری اور شیخ الوظائف کے بتائے گئے کسی نقش یا تعویذ سے فائدہ ہوا ہو تو ہمیں اس ای میل contact@ubqari.org پرتفصیل سے ضرور لکھیں ۔آپ کے قلم اٹھانے سے لاکھو ں کروڑوں لوگوں کو نفع ملے گا اور آپ کیلئے بہت بڑا صدقہ جاریہ ہوگا. - مزید معلومات کے لیے یہاں کلک کریں -- خاص تبدیلی اہم نوٹ: پہلے ہرماہ مغرب کے بعد حلقہ کشف المحجوب اور مراقبہ ہوتا تھا مگر اب صبح کے وقت اسم اعظم کے دم کے فوراً بعد ہوا کرے گا تاکہ مسافر سہولت سے گھروں کو واپس جاسکیں ۔۔۔۔۔ -- تسبیح خانہ لاہور میں تبرکات کی زیارت ہر جمعرات ہوگی۔ مغرب سے پہلے مرد اور درس و دعا کے بعد خواتین۔۔۔۔ -- حضرت حکیم صاحب دامت برکاتہم کی درخواست:حضرت حکیم صاحب ان کی نسلوں عبقری اور تمام نظام کی مدد حفاظت کا تصور کر کےحم لاینصرون ہزاروں پڑھیں ،غفلت نہ کریں اور پیغام کو آگے پھیلائیں۔۔۔۔۔ -- پرچم عبقری صرف تسبیح خانہ تک محدودہے‘ ہر فرد کیلئے نہیں۔ماننے میں خیر اور نہ ماننے میں سخت نقصان اور حد سے زیادہ مشکلات،جس نے تجربہ کرنا ہو وہ بات نہ مانے۔۔۔۔ --

نسل در نسل گناہوں کے اثرات


(حکیم محمد طارق محمود مجذوبی چغتائی (پی ۔ ایچ ۔ ڈی : امریکہ) ایڈیٹر : عبقری ) کل ملاقات کیلئے ایک عمر رسیدہ خاتون اپنے دو جوان بچوں کو ساتھ لیکر آئیں‘ زارو قطار رو رہی تھیں‘ کچھ دیر بعد ان کے آنسو تھمے اور آنسوئوں کے تھمنے تک میں مسلسل ان کو ٹشودیتا رہا۔ موصوفہ بولیں کہ دراصل بات یہ ہے… میرا بیٹا اس وقت پچیس سال کا جوان ہے اس نے آج تک تنکا بھی توڑ کر نہیں دیکھا‘ پتہ نہیں کیسے بْری عادتوں میں مبتلا ہوگیا ہے‘ شراب پیتا ہے‘ نشہ کرتا ہے‘ راتوں کو گھر سے باہر رہتا ہے‘ بات کریں تو غصہ‘ لڑائی جھگڑا کرتا ہے‘ ہروقت موبائل‘ نیٹ… میں اس کا حال کیا بتائوں۔ جیسا باپ ویسا بیٹا: گھر کے اس ماحول کی وجہ سے بیٹی کو طلاق ہوگئی ہے‘ اس کا ایک بچہ ہے اور اس کا سارا دن رونا مجھ سے برداشت نہیں ہوتا۔ آپ کے پاس آئے ہیں کیا آپ کے پاس اس کا کوئی حل ہے…؟ میں نے سب سے پہلے سوال کیا: اس کا باپ کیسا آدمی ہے؟ کہنے لگی یہ سوال آپ نہ ہی کرتے تو اچھا تھا‘ میں نے ساری زندگی اس کے باپ کی انہی حرکات کی وجہ سے روتے روتے گزاری پھر اس امید کے ساتھ جیتی رہی کہ شاید اولاد میرا سہارا بن جائیگی۔ دو بیٹے ہیں‘ ایک اس سے بڑا ہے اس کے بھی سارا دن یہی معاملات ہیں اور چھوٹے کے بھی یہی حالات ہیں۔ پھرمیں نے اگلا سوال کیا اس کا دادا کیسا آدمی تھا؟کہنے لگیں: میں نے ان کو دیکھا تونہیں لیکن سبھی کہتے ہیں وہ بھی ایسے ہی تھے۔ میں نیا گلا سوال کیا… اس کا پردادا کیسا آدمی تھا؟وہ خاتون کہنے لگیں ان کی مجھے خبر نہیں… تو فوراً میری نظر ایک دوسرے خاندان کی طرف چلی گئی وہ نوجوان بھی اکیس سال کا ہے اس کا باپ‘ اس کا دادا اور اس کاپردادا… ان چار نسلوںکو تو میں جانتا ہوں اس کے بعد کی مجھے خبر نہیں۔ ان کی صورت حال بھی بالکل یہی ہے۔ نشہ‘ شراب‘ مستی‘ موجیں‘ راتیں اور آوارگی… نہ ختم ہونے والا ایک انوکھا سلسلہ: پہلے دور میں ایسا ہوتا تھا بلکہ اب بھی گائے لینے سے پہلے کہتے ہیں اس کی ماں دکھائو۔ اس کی عادات کیسی ہیں؟ وہ دودھ کتنا دیتی ہے؟ اس نے کتنے بچے جنے ؟جو بہت عقلمند لوگ ہوتے ہیں وہ کہتے ہیں اس کی ماں کی ماں دکھائو۔ سوچیں تو سہی…!گائے کی ماں کی عادات گائے میں منتقل ہوسکتی ہیں کیا انسانوں کی عادات انسانوںمیں منتقل نہیںہوتیں؟ ہاں! ایک چیز اس مکافاتی عمل کو روک سکتی ہے وہ توبہ اور استغفار ہے اور ندامت ہے اس کے علاوہ مجھے تو کہیں کوئی راستہ نظر نہیں آتا… یہ عادات دراصل ایک لعنت ہے جو نسل درنسل منتقل ہوتی ہے اور یہ لعنت ایک قسم کی پھٹکار ہے اور اس پھٹکار کو صرف اللہ کی رضا ہی ختم کرسکتی ہے… ورنہ تجربات شاہد ہیں کہ یہ نہ ختم ہونے والا ایک انوکھا سلسلہ ہے۔ (www.ubqari.org) ٭…٭…٭